View RSS Feed

BunnY

Hum Apni Quwab Takhleeq Ko Aksanay Aye Hai . ہم اپنی قوّتِ تخلیق کو اکسانے آئے ہیں

Rate this Entry
Quote Originally Posted by BunnY View Post
ہم اپنی قوّتِ تخلیق کو اکسانے آئے ہیں : احمد ندیم قاسمی

ہم اپنی قوّتِ تخلیق کو اکسانے آئے ہیں
ضمیرِ ارتقاء میں بجلیاں دوڑانے آئے ہیں

جو گردش میں رہیں گے اور کبھی خالی نہیں ہوں گے
ہم ایسے جام بزمِ دہر میں چھلکانے آئے ہیں

اجل کی رہزنی سے ہر طرف طاری ہیں سنّاٹے
سرودِ زندگی کو نیند سے چونکانے آئے ہیں

ہوائیں تیز ہیں جل جل کے بجھتے ہیں چراغ اپنے
ارادے تند ہیں ہم شمعِ نو بھڑکانے آئے ہیں

وہ دیوانے جو ہمّت ہار کے بیٹھے تھے صدیوں سے
اب اپنی منجمد تقدیر سے ٹکرانے آئے ہیں

عروسِ زندگانی کا سوئمبر رچنے والا ہے
نئے ارجن مشیت کی کماں لچکانے آئے ہیں

Submit "Hum Apni Quwab Takhleeq Ko Aksanay Aye Hai . ہم اپنی قوّتِ تخلیق کو اکسانے آئے ہیں" to Digg Submit "Hum Apni Quwab Takhleeq Ko Aksanay Aye Hai . ہم اپنی قوّتِ تخلیق کو اکسانے آئے ہیں" to del.icio.us Submit "Hum Apni Quwab Takhleeq Ko Aksanay Aye Hai . ہم اپنی قوّتِ تخلیق کو اکسانے آئے ہیں" to StumbleUpon Submit "Hum Apni Quwab Takhleeq Ko Aksanay Aye Hai . ہم اپنی قوّتِ تخلیق کو اکسانے آئے ہیں" to Google

Tags: None Add / Edit Tags
Categories
Uncategorized

Comments