View RSS Feed

BunnY

Hajoom Fikar O Nazr SAy Demag Jaltay Hai .. ہجومِ فکر و نظر سے دماغ جلتے ہیں

Rate this Entry
Quote Originally Posted by BunnY View Post
ہجومِ فکر و نظر سے دماغ جلتے ہیں : احمد ندیم قاسمی

ہجومِ فکر و نظر سے دماغ جلتے ہیں
وہ تیرگی ہے کہ ہر سو چراغ جلتے ہیں

کچھ ایسا تند ہوا جا رہا ہے بادۂ زیست
کہ ہونٹ کانپتے ہیں اور ایاغ جلتے ہیں

چمک رہے ہیں شگوفے، دہک رہے ہیں گلاب
وفورِ موسمِ گل ہے کہ باغ جلتے ہیں

نہیں قریب تو کچھ دور بھی نہیں وہ دور
شفق کے روپ میں جس کے سراغ جلتے ہیں

ترے نصیب میں راتیں، مرے نصیب میں دن
ترے چراغ، مرے دل کے داغ جلتے ہیں

Submit "Hajoom Fikar O Nazr SAy Demag Jaltay Hai .. ہجومِ فکر و نظر سے دماغ جلتے ہیں" to Digg Submit "Hajoom Fikar O Nazr SAy Demag Jaltay Hai .. ہجومِ فکر و نظر سے دماغ جلتے ہیں" to del.icio.us Submit "Hajoom Fikar O Nazr SAy Demag Jaltay Hai .. ہجومِ فکر و نظر سے دماغ جلتے ہیں" to StumbleUpon Submit "Hajoom Fikar O Nazr SAy Demag Jaltay Hai .. ہجومِ فکر و نظر سے دماغ جلتے ہیں" to Google

Tags: None Add / Edit Tags
Categories
Uncategorized

Comments