View RSS Feed

BunnY

Mai Kab SAy Gosh Brazu Hu Pukaro Bhi .. میں کب سے گوش بر آواز ہوں، پکارو بھی

Rate this Entry
Quote Originally Posted by BunnY View Post
میں کب سے گوش بر آواز ہوں، پکارو بھی : احمد ندیم قاسمی

میں کب سے گوش بر آواز ہوں، پکارو بھی
زمین پر یہ ستارے کبھی اتارو بھی

مری غیور امنگو، شباب فانی ہے
غرورِ عشق کا دیرینہ کھیل ہارو بھی

سفینہ محوِ سفر ہو تو نا رسیدہ نہیں
قدم قدم پہ کنارے ہیں، تم سدھارو بھی

مرے خطوط پہ جمنے لگی ہے گردِ حیات
اداس نقش گرو، اب مجھے نکھارو بھی

بھٹک رہا ہے دھندلکوں میں کاروانِ خیال
بس اب خدا کے لیے کاکلیں سنوارو بھی

مری تلاش کی معراج ہو تمھی لیکن
نقاب اُٹھاؤ، نشانِ سفر ابھارو بھی

یہ کائنات ازل سے سپردِ انساں ہے
مگر ندیم! تم اس بوجھ کو سہارو بھی

Submit "Mai Kab SAy Gosh Brazu Hu Pukaro Bhi .. میں کب سے گوش بر آواز ہوں، پکارو بھی" to Digg Submit "Mai Kab SAy Gosh Brazu Hu Pukaro Bhi .. میں کب سے گوش بر آواز ہوں، پکارو بھی" to del.icio.us Submit "Mai Kab SAy Gosh Brazu Hu Pukaro Bhi .. میں کب سے گوش بر آواز ہوں، پکارو بھی" to StumbleUpon Submit "Mai Kab SAy Gosh Brazu Hu Pukaro Bhi .. میں کب سے گوش بر آواز ہوں، پکارو بھی" to Google

Tags: None Add / Edit Tags
Categories
Uncategorized

Comments